سوموار، 17 اگست، 2015

محبت دلیل کی محتاج نہیں

8 comments
برسوں پہلے جب اس کے والد کی مالی حالت اتنی اچھی نہ تھی کپڑے تو لے دے کے نئے بن ہی جاتے وہ بھی کبھی عید ،بقر عید پر لیکن سویٹر یا جوتے تو اکثر ہی "لندن بازار" سے خریدنے پڑتے،اللہ کے سہارے زندگی کی گاڑی چلی جارہی تھی شکر تھا کہ کسی کے آگے ہاتھ پھیلانے کی نوبت نہ آتی اور گزر بسر اچھے انداز میں ہو ہی جاتی روکھی سوکھی کھانے کو مل جاتی اور یوں سفید پوشی کا بھرم قائم تھا، وقت اپنی رفتار سے چلا جا رہا تھا کہ ایک دن ایک عجیب واقعہ ہوا بازار سے گزرتے ہوئیے اس کے والد نے اسے نئے جوتے خرید دئیے اور "بچہ" نئے جوتے خرید کے پھولے نہ سمایا، نئے جوتوں سے اس کی محبت "دیکھنے والی" تھی، ذرا مٹی لگ جاتی تو فوراً کپڑا لے کے اسے صاف کرتا کپڑا دستیاب نہ ہوتا تو قمیض کے کونے سے ہی اپنی "گرگابی" صاف کر لیتا اس کے دوست جوتوں سے اس کی "محبت" پر اس کا مذاق اڑاتے لیکن وہ دیوانہ اپنے جوتوں کی محبت میں دو سال تک گرفتار رہا تاآنکہ اس کی  "گرگابی" موسموں کے سردوگرم کے ہاتھوں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو گئی وہ تو اب بھی اسے اپنے سے جدا نہ کرتا لیکن  ایک دن جب وہ گھر پر موجود نہ تھا اس کی بڑی بہن نے ان ٹوٹے جوتوں کو اٹھا کے گھر کے پچھواڑے کچرے  کے ڈھیر پر پھینک دیا۔ مہینہ بھر گزرا ہوگا کہ چھت پہ کھیلتے ہوئیے "کپڑے کی بنی گیند" بھی اسی پچھواڑے جا گری. گیند تلاش کرتے کرتے جونہی اس کی نظر اپنے جوتوں پہ پڑی اس نے جھٹ سے آگے بڑھ کے انہیں اٹھا لیا، کن اکھیوں سے ادھر ادھر دیکھا اور اپنے "ہونٹ" اپنی گمشدہ "گرگابی" پر رکھ دئیے اور اسے "چوم" لیا 
کہ "محبت" تو "محبت" ہوتی ہے ناں جو ٹوٹے پھوٹے، پھٹے پرانے ہونے کی  دلیل کی محتاج نہیں ہوتی

سوموار، 10 اگست، 2015

آزادی کا جشن 90 کی دہائی میں

4 comments

اس گروپ کے ساتھ مجھے بھی پاکستان جانا ہے 
مگر کیوں ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟
آپ کی تو ابھی چھٹی نہیں بنتی
وہ اصل میں ناں میں 14 اگست پاکستان میں منانا چاہتا ہوں 
اور پھر مجھے چھٹی مل گئی 
یہ آج سے 25 برس پہلے کی بات ہے جب میں پاکستان کی سرحدوں سے دور تھا اور پاکستان آکر دھوم دھام کے جشنِ آزادی میں شریک ہونے کیلئے بے چین،اور جونہی مجھے چھٹی ملی بھاگم بھاگ پاکستان پہنچ گیا،تاکہ یہاں آکے پھر سے اس رونق سے لطف اندوز ہو سکوں جو یہاں کا خاصہ تھا
بچپن سے جڑی "جشنِ آزادی" کی حسین یادیں بس آج یادیں ہی ہیں کہ اب توہرسال آنے والا 14 اگست یونہی خاموشی سے گزر جاتا ہے
سکول میں چھٹیوں کے باوجود یکم اگست کو شہر کی مساجد میں سکول کھل جانے کے اعلانات ہوتے اور ساتھ ہی سکول میں حاضر نہ ہونے والے بچوں کے نام خارج کردینے کی وارننگ بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر اگلے ہی روز 90٪ طلبہ سکولوں میں حاضر ہوجاتے گراؤنڈ سے گھاس پھونس کوصاف کیا جاتا سب مل کے کلاس روم کی صفائی کرتے کہیں سفیدی کی ضرورت ہوتی تو "چونا" لگا کے کلاس روم کوچمکا دیتے، اور یوں چند ہی دنوں میں سکول خوب نکھرا نکھرا چمکا چمکا نظر آنے لگتا، 14 اگست کی صبح ہی صبح سارا سکول رنگ برنگی جھنڈیوں اور پاکستانی پرچموں سے سج دھج جاتا ،ہاں یاد آیا اس سے پہلےنمازِفجرمیں مسجد میں تقسیم ہونے والی "سرخ مٹھائی" اس بات کا اعلان ہوتی کہ آج پاکستان کا یومِ آزادی ہے، پاکستانی کی سلامتی کیلئے خصوصی دعاؤں کے بعد اونچی آواز میں آمین کی صدائیں اب قصہ پارینہ ہو چکیں ، سکول میں دن بھر رنگا رنگ پروگرامات، ترانے، ملی نغمے اور تقریری مقابلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پوزیشن ہولڈرز میں انعامات کی تقسیم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یوں یہ سارادن ہنستے کھیلتے اچھلتے کودتے اور عید کی طرح خوشیاں مناتے گزرتا، تحریکِ پاکستان، مہاجرین کی آمد اہلِ پاکستان کی ہمدردی وغم گساری اور اخوت وبھائی چارے کے سارے قصے انہیں تقاریب میں سنے تو نسیم حجازی کے "خاک اور خون" نے تحرکِ پاکستان کی "حقیقتوں"سے آشنا کیا اوریوں ہم اپنے آپ کو تصور ہی تصور میں ان قافلوں کا حصہ دیکھت رہے۔
14 اگست کی شام میں ان سجی سجائی رنگ برنگ جھنڈیوں کا سمیٹنا،گری پڑی  پاکستانی جھنڈے کے رنگ کی جھنڈیوں کو اٹھا کے چومنا آج بھی یاد آتا ہے تو یادوں کا ایک سیلِ رواں ہے جو امڈتا چلا آتا ہے،"پپو" کے ہاتھوں چھن جانے والی"پاکستانی جھنڈیوں"پر رونا مجھے آج بھی اچھی طرح یاد آتا ہے
بچپن میں سیکھا ہوا پاکستان سے محبتوں کا سبق "خون" کی طرح جسم میں گردش کرتا ہے تو ان لوگوں کیلئے دل سے بے شمار دعائیں نکلتی ہیں جوان جذبوں کو پروان چڑھانے کا باعث بنے
پاکستان زندہ باد

اس بلاگ کی تحریریں بذریعہ ای میل حاصل کریں

................................................................................

................................................................................
.

Google+ Followers