منگل، 1 اپریل، 2014

قائد ایسے ہوتے ہیں

7 comments
میں مسجد کی پہلی صف میں موجود تھا جب میں نے نماز پڑھتے ہوئے سادہ لباس میں ملبوس درویش صفت اس شخص کی جیب سے گرنے والے "ڈالر" کے اس "قلم" کو دیکھا جس کے ساتھ لکھنا ہم بھی معیوب سمجھتے ہیں کہ لکھا ہی جائے تو "پارکر" کے قلم سے،کہاں ایک صوبے کا سینئر وزیر اور اس کی سادگی کا یہ عالم۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ اسے سلامت رکھے 
سراج الحق یقیناً آج کے اس ترقی یافتہ دور میں بھی قرونِ اولٰی کی یاد تازہ کئے ہوئےہیں
میں میٹرک کا طالب علم تھا جب اس سے پہلی بار میری ملاقات ہوئی، سرخ وسفید چہرہ "گلابی اردو" لیکن اسے دیکھتے ہی نوجوانوں کے والہانہ نعرے 
ہمّت والا،جرات والا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناظمِ اعلٰی ناظم اعلٰی
اس سے ان کی محبت کا پتہ دے رہے تھے پھر بارہا اس سے ملنے کا اتفاق ہوتا رہا، اور آج وہ جب خیبر پختونخواہ کا سینئر وزیر ہے اس کی سیاہ داڑھی سفید ہو کر بزرگوں کی صف میں داخل ہوجانے کا اعلان کر رہی ہے تو اس سے ملتے ہوئے ایک بار پھر وہی 23 سال پہلےکا منظر میری نگاہوں میں گھوم گیا،وہی23 سال پہلے والا سراج الحق
فرق تھا تو اتنا کہ اب اس کی اردو اتنی "گلابی" نہ تھی جتنی 23 برس پہلے تھی۔
اور وہ منظر تھا 23 برس پہلے کاجامعہ پنجاب کا یونیورسٹی گراؤنڈ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلامی جمعیّت طلبہ پاکستان کا اجتماعِ عام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور اس اجتماع کا آخری روز
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ارکان جمعیّت نے اپنے تنظیمی دستور کے مطابق اگلے پانچ برسوں کیلئے سراج الحق کو ناظمِ اعلٰی منتخب کیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنسوؤں میں بھیگا چہرہ، سسکیاں اور آہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ذمّہ داری کا بوجھ نہ اٹھا سکنے کا خوف
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنسوؤں سے بوجھل آواز میں کارکنان سے مخاطب ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ شخص کیا بات کرے جسے الٹی چھری سے ذبح کر دیا گیا ہو،اور پھر سراج الحق کی قیادت میں اسلامی جمعیّت طلبہ کا قافلہءِ سخت جاں اپنی منزل کی جانب بڑھتا چلا گیا

اور آج 23 برس بعد ایک بار پھر میرا ناظمِ اعلٰی جماعت اسلامی کی امارت کی بھاری ذمہ داری کا اہل ٹھہرا ہے، بتانے والے بتاتے ہیں کہ جب جماعت اسلامی کے موجودہ امیر سیّد منوّر حسن نے اسے نئی ذمہ داریوں کی خبر دی تووہ ایک بار ھر زارو قظار رو دیا اور اس کے آنسوتھے کہ تھمنے کو نہیں آرہے تھے، اور بار بار یہ الفاظ دہرا رہا تھا کہ
"اتنی بڑی ذمہ داری کیسے اٹھاؤں گا"
اللہ تعالٰی سراج الحق کو استقامت دے کہ ایسے ہی درویش صفت قائدین کی قیادت میں ہی اسلامی تحریکیں اپنے منزل کی طرف گامزن اور انقلاب کی نوید بنا کرتی  ہیں

7 comments:

  • 1 اپریل، 2014 11:03 PM

    امر واقعہ ہے کہ پاکستان قحط الرجال کا شکار ہے۔ بطور خاص قائدین کی صفوں میں حقیقی رجال کار خال خال ہی نظر آتے ہیں بلکہ اب تو ناپید ہو چلے ہیں۔
    ایسے حالات میں سراج الحق صاحب جیسے افراد کی موجودگی یقیناً نعمت غیر مترقبہ ہے۔ اور کارکنان کے لیے باعث تحریک بھی ہے۔
    اللہ انہیں استقامت دے اور تحریک اسلامی کے لیے ان کے انتخاب کو باعث خیر و برکت بنائے ۔ آمین

  • 2 اپریل، 2014 8:49 AM

    پشاور کے ایک جنازہ می جب نماز جنازہ پڑھی گئی ،تو جنازہ گاہ کے گیٹ پر کافی رش ہونے کےسبب میں نے مناسب جانا کہ رش ختم ہونے کے بعد یہاں سے نکلونگا۔

    جب میں نکلنے لگا تو دیکھا کہ سراج الحق صاحب بھی اسی وقت نکل رہے تھے۔چنانچہ فورا میری طرف بڑھ کر ہاتھ ملایا۔حالانکہ اسوقت وہ سینیئر وزیر تھے۔

    اس سے آپ اسکی سادگی اور کشادہ دلی جان سکتے ہیں۔

  • 2 اپریل، 2014 9:50 AM

    غالب امکان یہ ہے کہ سراج صاحب نے ذمہ داری اٹھانے کا پلان ایڈوانس طے کرنے کے بعد ہی چناؤ میں حصہ لیا ہے۔

  • 3 اپریل، 2014 6:38 AM

    اکرام راجہ،جوانی پٹّا اورمنصور مکرّم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کی آمد کا شکریہ
    جوانی پٹّا ۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ کی اطلاع کیلئے عرض ہے کہ جماعت اسلامی کی امارت کے چناؤ میں کوئی شخص بھی بذاتِ خود حصّہ نہیں لے سکتا بلکہ منتخب شورٰی ارکان جماعت کی آسانی کیلئے اتفاقِ رائے کے ساتھ کوئی سے تین نام پیش کرتی ہے لیکن اس کے باوجود ارکان کے پاس یہ اختیار ہوتا ہے کہ وہ ان تین ناموں کے علاوہ کسی بھی دوسرے رکن کے حق میں اپنا حقِ رائے دہی استعمال کر سکتے ہیں

  • 3 اپریل، 2014 5:31 PM

    میں کبھی جماعت اسلامی میں نہیں رہا لیکن میرے احباب میں 1960ء تک اسلامی جمیعت طلباء کے اراکین ۔ کالج چھوڑنے کے بعد ان سے رابطہ نہ رہا ۔ پھر عملی زندگی میں جماعت اسلام کے کچھ احباب سے واسطہ پڑتا رہا ۔ ان لوگوں کو تو میں نے بہت باکردار پایا اور بے لوث خدمتگار بھی

  • 4 اپریل، 2014 12:15 AM

    خوبصورت تحریر ہے اسلم بھائی۔ سراج الحق صاحب کی سادگی اور بہادری کے دشمن بھی گواہ ہیں۔ اللہ ان کے چنائو کو تحریک کے لئے برکت کا باعث بنائے۔ آمین۔
    جن لوگوں کو منور صاحب کا امارت سے ہٹنا اور سراج صاحب کا امیر بننا ہضم نہیں ہو رہا ان کیلئے عرض ہے کہ اللہ کے حکم سے ہم حبشی امیر کی بھی دل و جان سے اطاعت کریں گے اگر وہ ہمیں اللہ اور اسکے رسول کے بتائے ہوئے رستے پر چلاتا رہے۔

  • 11 اپریل، 2014 10:29 PM

    ماشاء اللہ کیا خوب لکھا اللہ کرے زور قلم اورزیادہ اور کچھ ماضی کی یادیں بھی تازہ ہوگئیں۔

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

شکریہ

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔

اس بلاگ کی تحریریں بذریعہ ای میل حاصل کریں

................................................................................

................................................................................
.

Google+ Followers