ہفتہ، 19 اپریل، 2014

لکھ پتی بھکاری

4 comments
میں نے پانچ لاکھ روپے اکٹھے کرکے بابا کو دئیے کہ کہیں کوئی سر چھپانے کی جگہ کوئی گھر بنانے کا سامان کرولیکن بابا نے گھر بنانے کی بجائے اپنا گھر بسا لیا ............... شاہ صاحب اپنی بات کہ رہے تھے اور میں حیران ہوا جا رہا تھا
شاہ جی میرے پرانے مریض ہیں، بلکہ یوں کہنا مناسب ہو گا کہ میں ان کا فیملی ڈاکٹر ہوں اوراب تو یہ رشتہ دوستی میں ڈھل چکا ہے،اگرچہ "پیر"ہیں لیکن پیروں جیسا مزاج نہیں رکھتے بہت "کھلے ڈلّے" آدمی ہیں۔آج سہ پہر جب وہ بیٹے کی میڈیسن لینے میرے پاس آئے بیٹھے تھے کہ اسی اثناء میں ایک مانگنے والا ہاتھ پھیلائے آپہنچامیں نے اس سے جان چھڑانے کےلئے اس کے پھیلے ہاتھ پر ریزگاری رکھ دی۔

 شاہ جی کہنے لگے ان لوگوں کو تو بالکل بھی کچھ دینا نہیں چاہئے، جب میں نے وجہ پوچھی تو فرمانے لگے ایسے لوگ حقداروں کا حق مارتے ہیں۔ پھر خود ہی اپنے ساتھ پیش آنے والا ایک واقعہ سنایا کہتے ہیں ایک مانگنے والا اکثر میرے گھر کے باہر صدا لگایا کرتا تھا اور میں اسے کچھ نہ کچھ دے دیتا کہ غریب آدمی ہے دعا کرے گا ایک عرصہ بیت گیا اور اس سے میری دوستی ہو گئی ایک دن میں نے باتوں ہی باتوں میں میں نے اس سے سوال کیا کہ تم جوان آدمی ہو کوئی محنت مزدوری کرو اور جھگیوں میں رہنے کی بجائے کہیں اپنا گھر بناؤ اور عزت کی زندگی بسر کرو کہنے لگا شاہ جی میں نے پانچ لاکھ روپے اکٹھے کرکے بابا کو دئیے کہ کہیں کوئی سر چھپانے کی جگہ کوئی گھر بنانے کا سامان کرولیکن بابا نے گھر بنانے کی بجائے اپنا گھر بسا لیا اور پڑوس کے جھگی نشینوں کی لڑکی بھگا لے گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہٹّا کٹّا شخص ہاتھوں میں ڈنڈا اٹھائے کلینک میں داخل ہوا اور اپنا کشکول آگے بڑھا دیا، جوان آدمی ہو تم کوئی محنت مزدوری کیوں نہیں کرتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
صاحب کوئی کام نہیں ملتا اورکوئی بھی مجھے کام پر رکھتا ہی نہیں،
اگر کوئی کام ملے تو کرو گے
ملے گا تو کیوں نہیں کروں گا جی

اچھا ٹھیک ہے پھرکل آجاؤ،گاؤں میں ہماراایک رہٹ ہے بس وہاں پربیٹھ کر ڈیوٹی کرنی ہے کہ بیل چلتا رہے تاکہ کھیتوں کو مسلسل پانی کی فراہمی میں کوئی کمی نہ آنے پائے
کہنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جی یہ کام تو مجھ سے نہ ہو سکے گا
اچھا توآئندہ یہاں نظر آئے ناں تو پھر تمہاری خیر نہیں
ایک طویل عرصہ بعد جب میں نے کلینک شفٹ کیا تو ابھی صبح صبح کلینک کھولا ہی تھا کہ جانی پہچانی آواز ابھری "اللہ پاک کرم کرے جی" ،،،،،،،،،،،،،،،
اوئے تو پھر آگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا تے ڈاکٹر صاحب تسی اتھے آگئے او(اچھا تو ڈاکٹر صاحب آپ یہاں آگئے ہیں) 
اور پھر میں یہ سن کر تو حیران ہی رہ گیا کہ وہ اب دو ٹرکوں کا مالک ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


4 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

شکریہ

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔

اس بلاگ کی تحریریں بذریعہ ای میل حاصل کریں

................................................................................

................................................................................
.

Google+ Followers